جولائی ۲۰۱۵

فہرست مضامین

اللہ کی راہ میں خرچ ،دنیا و آخرت کی فلاح

عبدالمتین اشاعتی | جولائی ۲۰۱۵ | تزکیہ و تربیت

ہر صاحب ِ ایمان ساری زندگی صدقہ و زکوٰۃ ادا کرتا ہے اور اللہ کی راہ میں خرچ کرتا ہے۔ اس حوالے سے ایک انتخاب پیش ہے۔

زکوٰۃ و صدقہ ادا کرنا، اللّٰہ کی راہ میں خرچ کرنا:

__اللہ اور اس کے رسولؐ کے حکم کی بجاآوری ہے۔

__بُخل جیسی خطرناک و مہلک بیماری سے بچاتا ہے۔

__نیکی اور تقویٰ کے کاموں میں باہمی تعاون ہے۔

__ صاحب ِ ایمان ہونے کی دلیل ہے۔

__اس سے  نفس پاک و صاف ہوتا ہے۔

__اس سے نیکی میں اضافہ ہوتا ہے۔

__مال و دولت جیسی نعمت کی شکرگزاری و قدردانی کا احساس بیدار ہوتا ہے۔

__گناہوں کی بخشش ، برائیوں کے مٹنے اور لغزشوں و خطائوں کی آگ ٹھنڈی کرنے کا ذریعہ ہے۔

__آخرت میں مال کے وبال سے سلامتی کا ذریعہ ہے۔

__ اس سے بّر و احسان اور نیکی کا درجہ نصیب ہوتا ہے۔

__متقین کی صفات میں سے ہے۔

__ اخلاقِ حسنہ اور اعمالِ صالحہ کی افزایش کا ذریعہ ہے۔

__سخت گھبراہٹ کے دن خوف سے امن و امان کا ذریعہ ہے۔

__مال کی حفاظت اور افزایش کا ذریعہ ہے۔

__ بہت سے امراض کی دوا ہے۔

__مصائب و حوادث اور تمام بیماریوں سے انسان کی حفاظت کا ذریعہ ہے۔

__ لوگوں کے مابین اُلفت و محبت کا ذریعہ ہے۔

__ وعدہ ہے کہ جو کچھ تم راہِ خدا میں خرچ کرو گے اُس کا پورا پورا بدلہ تم کو ادا کردیا جائے گا ۔

__ اس سے لوگوں کے درمیان حسد، کینہ اور بُغض کا مادہ کمزور ہوتا ہے۔

__ انفاق فی سبیل اللہ سے بندہ شرفا اور اہلِ فضل و کمال کے ساتھ متصف ہوتا ہے۔

__ رحمت ِ باراں کا نزول ہوتا ہے اور زکوٰۃ و صدقہ روک لینے سے رحمت ِ باراں بند ہوجاتی ہے۔

__اس کی ادایگی، میدانِ حشر میں کامیابی، جنت میں داخلہ اور جہنم سے نجات کا ذریعہ ہے۔

__عذابِ قبر سے نجات کا ذریعہ ہے۔

__ قیامت کے دن اللہ تبارک و تعالیٰ کاقرب اور صدقے کا سایہ حاصل ہونے کا ذریعہ ہے۔

__دینے والا اللہ تعالیٰ کی طرف سے تعریف کا مستحق ٹھیرتا ہے۔

__انسان کو بُری موت سے بچاتا ہے۔

__اس سے تواضع و انکسار آتا ہے اور کبرونخوت اور فخرو ریاکاری ختم ہوتی ہے۔

__ دل میں اللہ تعالیٰ کی محبت پیدا کرتا ہے۔

__اس کی وجہ سے انسان اللہ تعالیٰ کی نعمتوں کی ناشکری سے بچا رہتا ہے۔

__اس سے بُرائی کے ستّر دروازے بند ہوجاتے ہیں۔

__قبولیت ِ دُعا اور مصیبت دُور کرنے کا ذریعہ ہے۔

__اس سے رزق میں وسعت و کشادگی ہوتی ہے۔

__اس کی وجہ سے دشمنوں کے خلاف اللہ کی جانب سے مدد آتی ہے۔

__تنگی کے بعد کشادگی اور آسانی کا سبب ہے۔

__مجاہدین فی سبیل اللہ کو دینے والے کو بھی مجاہد کی طرح اجر ملتا ہے۔

__اپنے ادا کرنے والے کو طاعت ِ خداوندی پر آمادہ کرتا ہے۔

__ اُمورِ دنیا کی انجام دہی کی آسانی کا سبب بنتا ہے۔

__عام ہلاکت اور قحط سالی میں مبتلا ہونے سے بچنے کا ایک اہم ذریعہ ہے۔

__پابندی سے ادا کرنے والے کے مال میں برکت آتی ہے اور اس کی عمر و اولاد بڑھتی ہے۔

__ یتیموں کی کفالت کرنے والے شخص کو جنت میں نبی اکرمؐ کا قرب حاصل ہوگا۔

__ اللہ تعالیٰ دینے والے کے کھانے پینے اور پہننے کا انتظام فرماتے ہیں۔

__اس کا اجرو ثواب موت کے بعد بھی جاری رہتا ہے۔

__جو شخص اپنے مال سے مسجد بناتا ہے اللہ تعالیٰ جنت میں اس کے لیے گھر بناتے ہیں۔

__ادا کرنے والا شخص جنت کے بالاخانوں میں رہایش پذیر ہوگا۔

__اگرچہ جانوروں اور پرندوں پر خرچ کیا جائے بہرحال اس کا ثواب ملتا ہے۔

__ اقتصادی و معاشی تنگیوں کا حل ہے۔

__ اُمت ِ مسلمہ کے مابین رابطے کا ذریعہ ہے۔

__سنگ دلوں کی سنگ دلی کا علاج ہے۔

__بندے کو قیامت کے دن گنجے سانپ سے بچائے گا اور یہ گنجا سانپ ایک مضبوط و قوی اژدہا ہے۔

__بندے کو منافقین کی صفات کے ساتھ متصف ہونے سے بچاتا ہے۔

__معیت ِ باری تعالیٰ کے حصول کا سبب ہے، جیساکہ ارشاد ربانی ہے:

                اِنَّ اللّٰہَ مَعَ الَّذِیْنَ اتَّقَوْا وَّ الَّذِیْنَ ھُمْ مُّحْسِنُوْنَo(النحل ۱۶:۱۲۸) ’’اللہ ان لوگوں کے ساتھ ہے جو تقویٰ سے کام لیتے ہیں اور احسان پر عمل کرتے ہیں‘‘۔ (ماہنامہ شاہراہِ علم، جولائی ۲۰۱۴ئ، نندوربار، مہاراشٹر)